اصلِ شہود و شاہد و مشہود ایک ہے

From Wikisource
Jump to navigation Jump to search
اصلِ شہود و شاہد و مشہود ایک ہے  (1924) 
by محمد اقبال

“اصلِ شہود و شاہد و مشہود ایک ہے”
غالبؔ کا قول سچ ہے تو پھر ذکرِ غیر کیا

کیوں اے جنابِ شیخ! سُنا آپ نے بھی کچھ
کہتے تھے کعبے والوں سے کل اہلِ دَیر کیا

ہم پُوچھتے ہیں مسلمِ عاشق مزاج سے
اُلفت بُتوں سے ہے تو بَرہمن سے بَیر کیا!


This work is now in the public domain in Pakistan because it originates from Pakistan and its term of copyright has expired. According to Pakistani copyright laws, all photographs enter the public domain fifty years after they were published, and all non-photographic works enter the public domain fifty years after the death of the creator.