(دیوان غالب/قصائد/قصیدہ نمبر 2 منقبت (علی کے لیے

From Wikisource
Jump to navigation Jump to search


منقبت (علی کے لیے)[edit]

دہر جُز جلوۂ یکتائِ معشوق نہیں
ہم کہاں ہوتے اگر حسن نہ ہوتا خود بیں

بے دلی ہاۓ تماشا کہ نہ عبرت ہے نہ ذوق
بے کسی ہاۓ تمنّا کہ نہ دنیا ہے نہ دیں

ہَرزہ ہے نغمۂ زیروبمِ ہستی و عدم
لغو ہے آئینۂ فرقِ جنون و تمکیں

نقشِ معنی ہمہ خمیازۂ عرضِ صورت
سخنِ حق ہمہ پیمانۂ ذوقِ تحسیں

لافِ دانش غلط و نفعِ عبارت معلوم!
دُردِ یک ساغرِ غفلت ہے۔ چہ دنیا و چہ دیں

مثلِ مضمونِ وفا باد بدستِ تسلیم
صورتِ نقشِ قدم خاک بہ فرقِ تمکیں

عشق بے ربطئ شیرازۂ اجزاۓ حواس
وصل، زنگارِ رخِ آئینۂ حسنِ یقیں

کوہکن، گرسنہ مزدورِطرب گاہِ رقیب
بے ستوں، آئینۂ خوابِ گرانِ شیریں

کس نے دیکھا نفسِ اہلِ وفا آتش خیز
کس نے پایا اثرِ نالۂ دل ہاۓ حزیں!

سامعِ زمزمۂ اہلِ جہاں ہوں، لیکن
نہ سرو برگِ ستائش، نہ دماغِ نفریں

کس قدر ہَرزہ سرا ہوں کہ عیاذاً باللہ
یک قلم خارجِ آدابِ وقار و تمکیں

نقشِ لاحول لکھ اے خامۂ ہذیاں تحریر
یا علی عرض کر اے فطرتِ وسواسِ قریں

مظہرِ فیضِ خدا، جان و دلِ ختمِ رسل
قبلۂ آلِ نبی (ص)، کعبۂ ایجادِ یقیں

ہو وہ سرمایۂ ایجاد جہاں گرمِ خرام
ہر کفِ خاک ہے واں گَردۂ تصویرِ زمیں

جلوہ پرداز ہو نقشِ قدم اس کا جس جا
وہ کفِ خاک ہے ناموسِ دو عالم کی امیں

نسبتِ نام سے اس کی ہے یہ رُتبہ کہ رہے
اَبَداً پُشتِ فلک خَم شدۂ نازِ زمیں

فیضِ خُلق اس کا ہی شامل ہے کہ ہوتا ہے سدا
بوۓ گل سے نفسِ بادِ صبا عطرآگیں

بُرّشِ تیغ کا اس کی ہے جہاں میں چرچا
قطع ہو جاۓ نہ سر رشتۂ ایجاد کہیں

کُفر سوز اس کا وہ جلوہ ہے کہ جس سے ٹوٹے
رنگِ عاشق کی طرح رونقِ بت خانۂ چیں

جاں پناہا! دل و جاں فیض رسانا! شاہا!
وصئِ ختمِ رسُل تو ہے بہ فتواۓ یقیں

جسمِ اطہر کو ترے دوشِ پیمبر منبر
نامِ نامی کو ترے ناصیۂ عرش نگیں

کس سے ممکن ہے تری مدح بغیر از واجب
شعلۂ شمع مگر شمع پہ باندھے آئیں

آستاں پر ہے ترے جوہرِ آئینۂ سنگ
رَقَمِ بندگئ حضرتِ جبریلِ امیں

تیرے در کے لۓ اسبابِ نثار آمادہ
خاکیوں کو جو خدا نے دیۓ جان و دل و دیں

تیری مدحت کے لۓ ہیں دل و جاں کام و زباں
تیری تسلیم کو ہیں لَوح و قلم دست و جبیں

کس سے ہو سکتی ہے مدّاحئ ممدوحِ خدا
کس سے ہو سکتی ہے آرائشِ فردوسِ بریں!

۔ق۔ جنسِ بازارِ معاصی اسداللہ اسد
کہ سوا تیرے کوئی اس کاخریدار نہیں

شوخئ عرضِ مطالِب میں ہے گستاخِ طلب
ہے ترے حوصلۂ فضل پہ از بس کہ یقیں

دے دعا کو مری وہ مرتبۂ حسنِ قبول
کہ اجابت کہے ہر حرف پہ سو بار آمیں

غمِ شبّیر سے ہو سینہ یہاں تک لبریز
کہ رہیں خونِ جگر سے مری آنکھیں رنگیں

طبع کو الفتِ دُلدُل میں یہ سرگرمئ شوق
کہ جہاں تک چلے اس سے قدم اور مجھ سے جبیں

دلِ الفت نسب و سینۂ توحید فضا
نگہِ جلوہ پرست و نفسِ صدق گزیں

صَرفِ اعدا اثرِ شعلۂ دودِ دوزخ