دیوان غالب/قصائد/قصیدہ نمبر 1 منقبتِ حیدری

From Wikisource
Jump to: navigation, search
دیوان غالب by مرزا اسد اللہ خان غالب
قصیدہ نمبر 1 منقبتِ حیدری


منقبتِ حیدری[edit]

سازِ یک ذرّہ نہیں فیضِ چمن سے بیکار
سایۂ لالۂ بےداغ سویداۓ بہار

مستئ بادِ صبا سے ہے بہ عرضِ سبزہ
ریزۂ شیشۂ مے جوہرِ تیغِ کہسار

سبز ہے جامِ زمرّد کی طرح داغِ پلنگ
تازہ ہے ریشۂ نارنج صفت روۓ شرار

مستئِ ابر سے گلچینِ طرب ہے حسرت
کہ اس آغوش میں ممکن ہے دو عالم کا فِشار

کوہ و صحرا ہمہ معمورئِ شوقِ بلبل
راہِ خوابیدہ ہوئی خندۂ گل سے بیدار

سونپے ہے فیضِ ہوا صورتِ مژگانِ یتیم
سر نوشتِ دو جہاں ابر بہ یک سطرِ غبار

کاٹ کر پھینکۓ ناخن جو باندازِ ہلال
قوت نامیہ اس کو بھی نہ چھوڑے بیکار

کفِ ہر خاک بہ گردون شدہ قمری پرواز
دامِ ہر کاغذِ آتش زدہ طاؤسِ شکار

مےکدے میں ہو اگر آرزوۓ گل چینی
بھول جا یک قدحِ بادہ بہ طاقِ گلزار

موجِ گل ڈھونڈھ بہ خلوت کدۂ غنچۂ باغ
گُم کرے گوشۂ مےخانہ میں گر تو دستار

کھینچے گر مانئ اندیشہ چمن کی تصویر
سبزہ مثلِ خطِ نو خیز ہو خطِّ پرکار

لعل سے کی ہے پۓ زمزمۂ مدحتِ شاہ
طوطئِ سبزۂکہسار نے پیدا منقار

وہ شہنشاہ کہ جس کی پۓ تعمیرِ سرا
چشمِ جبریل ہوئی قالبِ خشتِ دیوار

فلک العرش ہجومِ خمِ دوشِ مزدور
رشتۂ فیضِ ازل سازِ طنابِ معمار

سبز نُہ چمن و یک خطِ پشتِ لبِ بام
رفعتِ ہمّتِ صد عارف و یک اوجِ حصار

واں کی خاشاک سے حاصل ہو جسے یک پرِکاہ
وہ رہے مِر وحۂ بالِ پری سےبیزار

خاکِ صحراۓ نجف جوہرِ سیرِ عُرفا
چشمِ نقشِ قدم آئینۂ بختِ بیدار

ذرّہ اس گرد کاخورشید کو آئینہ ناز
گرد اُس دشت کی اُمّید کو احرامِ بہار

آفرینش کو ہے واں سے طلبِ مستئ ناز
عرضِ خمیازۂ ایجاد ہے ہرموجِ غبار


مطلعِ ثانی

فیض سے تیرے ہے اے شمعِ شبستانِ بہار
دلِ پروانہ چراغاں، پرِ بلبل گلنار

شکلِ طاؤس کرے آئینہ خانہ پرواز
ذوق میں جلوے کے تیرے بہ ہواۓ دیدار

تیری اولاد کے غم سے ہے بروۓ گردوں
سِلکِ اختر میں مہِ نو مژۂ گوہر بار

ہم عبادت کو، ترا نقشِ قدم مُہرِ نماز
ہم ریاضت کو، ترے حوصلے سے استظہار

مدح میں تیری نہاں زمزمۂ نعتِ نبی
جام سے تیرے عیاں بادۂ جوشِ اسرار

جوہرِ دستِ دعا آئینہ یعنی تاثیر
یک طرف نازشِ مژگان و دگر سو غمِ خار*

مَردُمک سے ہو عزا خانۂ اقبالِ نگاہ
خاکِ در کی ترے جو چشم نہ ہوآئینہ دار

دشمنِ آلِ نبی کو بہ طرب خانۂ دہر
عرضِ خمیازۂ سیلاب ہوطاقِ دیوار

دیدہ تا دل اسدآئینۂ یک پرتوِ شوق
فیضِ معنی سے خطِ ساغرِ راقم سرشار

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

  • نسخۂ مہر میں "غمخوار"